بہار کے شیخ پورا میں ایک بچی اپنی زندگی کی آخری سانسیں گن رہی ہے لیکن اس کے والدین نے اسے کڈنی دینے سے انکار کردیا ہے کیونکہ وہ ایک بیٹی ہے۔

بیٹی بچاؤ اور بیٹی پڑھاؤ لو لیکر حکومت کی جو بھی نیت رہی ہو لیکن ہندوستان میں آج بھی ایسے والدین کی کمی نہیں ہے جو اپنے بیٹے اور بیٹیوں میں فرق کرتے ہیں یہی وجہ ہے کہ بیٹی ہونے کی وجہ سے کنچن تڑپ تڑپ کر مر رہی ہے مگر خبروں کے مطابق ماں باپ دونوں نے ایک بیٹی کے لئے اتنا رسک لینا مناسب نہیں سمجھا اور ان دونوں کے اور باقی رشتے دار بھی وہاں سے دھیرے دھیرے غائب ہوگئے۔
کنچن صدر علاقے کے اوگل گاؤں کے رام شریہ یادو کی ہونہار بیٹی ہے۔ اسی سال کنچن نے میٹرک فرسٹ ڈویژن سے پاس کیا ہے۔ دوماہ پہلے وہ بالکل ٹھیک تھی اچانک طبیعت خراب ہوئی تو پٹنہ کے آئی جی ایم ایس میں دکھایا۔ ڈاکٹروں نے بتایا کہ دونوں کڈنی فیل ہوگئی ہے۔
گھر پر پڑی کنچن موت کا انتظار کررہی ہے، گناہ ہے صرف بیٹی ہونا۔

 

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here